مولانا طارق جمیل کی برانڈ کے خلاف پراپیگنڈہ

sample-ad

معروف مذہبی اسکالر مولانا طارق جمیل نے اپریل میں اپنے نام سے شروع کیے جانے والا ملبوسات کا برانڈ ‘ایم ٹی جے’ متعارف کروایا تھا اور چند روز قبل انہوں نے کراچی میں اس کے پہلے اسٹور کا افتتاح بھی کیا تھا

تاہم ایم ٹی جے اسٹور کے افتتاح کے بعد سے مولانا طارق جمیل کو سوشل میڈیا صارفین کی شدید تنقید کا سامنا بھی ہے

ان کے اسٹور کے افتتاح کے موقع پر لوگوں کی بڑی تعداد کی وجہ سے تقریب کو کورونا کے پھیلاؤ کی وجہ بھی قرار دیا جارہا ہے

26 اپریل کی دوپہر کو جب ایم ٹی جے اسٹور کا افتتاح کیا گیا تو یہ بتایا گیا تھا کہ برانڈ کی مصنوعات کی قیمتیں عام مارکیٹ سے مطابقت رکھتے ہوئے 2 ہزار سے 5 ہزار روپے کے درمیان ہیں

تاہم بعدازاں لوگوں کی جانب سے یہ شکایت سامنے آئی کہ ان کے برانڈ کے کپڑے بھی دیگر بڑے برانڈز کی طرح کافی مہنگے ہیں

مولانا طارق جمیل کے برانڈ ایم ٹی جے کا افتتاح

یہی نہیں بلکہ اس کے بعد مختلف سوشل میڈیا سائٹس پر ایم ٹی جے کے لوگو کے ساتھ ایک ازار بند کی تصویر سوشل میڈیا پر وائرل ہونے لگی جس کے حوالے سے کہا جارہا تھا کہ اس کی قیمت 550 روپے ہے

اس حوالے سے سوشل میڈیا صارفین نے مولانا طارق جمیل کے برانڈ پر دوبارہ اعتراض کیا اور مختلف قسم کے تبصرے کرتے ہوئے انہیں شدید تنقید کا نشانہ بنایا گیا

سوشل میڈیا صارفین نے یہ بھی سوال اٹھایا کہ ایسا کیسے ممکن ہے کہ 10 روپے کی چیز کو 550 روپے میں فروخت کیا جائے

تاہم سوشل میڈیا پر وسیع پیمانے پر تنقید کے بعد ایم ٹی جے کی جانب سے ایک بیان میں وائرل ہونے والی تصویر کی تردید کی گئی

مولانا طارق جمیل کے برانڈ کی جانب سے آفیشل اکاؤنٹس پر یہ بیان اردو اور انگریزی زبان میں جاری کیا گیا

بیان میں کہا گیا کہ ‘ایم ٹی جے برانڈ اس خبر کی تردید کرتا ہے کہ یہ برانڈ ایسا ازاربند، جس کی قیمت 550 روپے ہے، اسے بنارہا ہے اور فروخت کررہا ہے’

مزید کہا گیا کہ ‘کچھ دنوں سے اس بے بنیاد خبر کو پھیلایا جارہا ہے’

اس حوالے سے جاری بیان میں مزید کہا گیا کہ ‘ہم یہ واضح کرنا چاہتے ہیں کہ ہم نہ ہی یہ پروڈکٹ بنارہے ہیں اور نہ ہی یہ ہماری ویب سائٹ اور اسٹورز پر موجود ہے’

برانڈ کی جانب سے مزید کہا گیا کہ جو لوگ اس جعلی خبر کو پھیلا رہے ہیں، انہیں رپورٹ کرنے میں ہماری مدد کریں

sample-ad

Facebook Comments

POST A COMMENT.